5 Famous Urdu Ghazals For Urdu Poetry Lovers

Urdu Sad Ghazals – Poetry in Urdu

غزل نمبر 1

جن دنوں تم بھی مرے ساتھ ہوا کرتے تھے

کتنے اچھے یہی حالات ہوا کرتے تھے

اب جو رہتے ہیں مرے ذہن میں سوچیں بن کر

ان دنوں دل میں یہ جذبات ہوا کرتے تھے

اب وہی ابر مری پیاس بڑھا دیتے ہیں

جوکبھی باعث برسات ہوا کرتے تھے

کھویا رہتا تھا میں ہر وقت تری آنکھوں میں

صرف تیرے لئے دن رات ہوا کرتے تھے

اب اکیلا ہوں میں جس جھیل کنارے پہ ، یہیں

مرے ہاتھوں میں ترے ہاتھ ہوا کرتے تھے

جن کے جسموں پھر میں اب زخم خزاں کے ارمان

ان درختوں پہ کبھی بات ہوا کرتے تھے

(علی ارمان)

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

2غزل نمبر

تم سے جومحبت ہے ساتھ ساتھ چلتے ہیں

 راستہ  بدلنے  میں  دیر  کتنی  لگتی ہے

کل تلک جو روتے تھے آج بھول بیٹھے ہیں

ذات کے اُجڑنے میں دیر کتنی لگتی ہے

ہاتھ کی لکیروں پر اس قدر جو نازاں ہو

وقت کے بدلنے میں دیر کتنی لگتی ہے

آپ سا کوئی حسیں زندگی میں آجائے

جام کے چھلکنے میں دیر کتنی لگتی ہے

(منير احمد)

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

3غزل نمبر

تاروں میں ہے چمک نہ گلابوں میں باس ہے

تم کیا گئے ہو شہر کی ہر شے اُداس ہے

کیسے چھپاؤں گا میں ترے پیار کی دھنگ

ہرشخص ترے شہر کا چہرہ شناس ہے

آ دیکھ میری جان ترے انتظار میں

سینے میں اضطراب ہے آنکھوں میں پیاس ہے

خوشیوں کی مجھ کو دوستو کوئی طلب نہیں

مجھے کو ہے غم سے پیار مجھے غم ہی راس ہے

چاروں طرف ہے شہر میں کھوئی ہوئی فضا

ہر اک قدم پہ آج تو خوف و ہراس ہے

لیتا ہے احترام سے وہ شخص میرا نام

اس کو مری وفاؤں کا اتنا تو پاس ہے

آجا کہ ہیں امید کی شمعیں جلی ہوئیں

آجا کہ آج بھی ترے ملنے کی آس ہے

میں معتبر ہوں اپنے قبیلے میں اس لیے

منان میرے تن پہ وفا کا لباس ہے

(منان قدیر منان)

Likh Rakha Hy Ehd e Tark Ulfat

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

4غزل نمبر

ذرا  یہ  ہاتھ   تھما  کر   مجھے   کھڑا    کرنا

میں  چل  پڑوں  گا  مرے   دوستو  دعا  کرنا

وہ جب بھی چاہے مجھے چھوڑ  کر چلا جائے

مری  سرشت   میں  شامل   نہیں   گلہ  کرنا

بچھڑنے  والے  نے  جب  لوٹ  کر  نہیں دیکھا

اب  اپنے   سر   پہ   کھڑا   آسمان   کیا   کرنا

میں کربلا میں کھڑا ہوں پھر امتحاں کے لیے

میں سرخرو  ہوں  مجھے  حوصلہ  عطا کرنا

امیر  شہر  کا   یہ   حکم   ہے   کہ   پر   کاٹو

پھر  اس  کے  بعد  پرندے  سبھی  رہا  کرنا

بچھڑ  نہ  جائے  کہیں  فاصلہ  ضروری   ہے

نصیر   اس   کو   ذرا   دیر   سے   ملا   کرنا

(نصیر بلوچ)

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

5غزل نمبر

میری اُداسی کا سبب لوگوں نے کیوں پوچھا نہیں

کوئی بھی اس شہر میں میرے سوا تنہا نہیں

تجھ سے مرا اے زندگی شاید کوئی رشتہ نہیں

تو بادلوں کی پیاس ہے میں آگ کا دریا نہیں

کھولا دریچہ چاند کا نکلیں تری پر چھائیاں

یادوں کے بن میں شام نے تنہا مجھے چھوڑا نہیں

تیزاب کی اک بوندسی چلتی ہے میرے ذہن پر

اے صبح کی پہلی کرن میں رات بھر سویا نہیں

شہنائیوں کی راہ میں حائل ہوئیں تنہائیاں

میں نے تمہیں جانا نہیں تم نے مجھے سمجھا نہیں

(ظفر نیازی)

متعلقہ ناولز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے