Funny Jokes in Urdu for Doctors – Part 5

:مزاحیہ لطیفے

ایک دوست نے دوسرے دوست سے کہا: ”میں اپنی زندگی کا مشکل اور تکلیف دہ کام ہمیشہ ناشتے سے پہلے کرتا ہوں۔“

دوسرا دوست : ”ایسا کون سا کام ہے؟“

پہلا دوست : ”بستر سے اُٹھنا ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک شخص مٹھائی کی دکان پر پہنچا اورحلوائی سے کہا : ” ایک کلو مٹھائی دے دو، پیسے کل دوں گا ۔“

حلوائی نے بورڈ کی طرف اشارہ کیا، جس پر لکھا تھا : ”ادھار محبت کی قینچی ہے۔“

بورڈ کی عبارت پڑھ کر وہ شخص بولا: ” جب تم اُدھا ہی نہیں دو گے تو تم سے محبت کون کرے گا ۔ “

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

دو دوست بیٹھے باتیں کر رہے تھے۔

یک نے کہا : ” بھئی ، سلیم تو ایسے عمدہ اور مزے دار لطیفے سناتا ہے کہ انسان تو کیا گدھے بھی ہنس پڑتے ہیں۔ میرا تو ہنس ہنس کر برا حال ہو جاتا ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

حریم : ”امی! آج میری جرأت دیکھ کر میری استانی حیران رہ گئیں ۔”

امی: ”وہ کیسے؟“

حریم : ” میں انگریزی کے پیریڈ میں اردو کا کام کر رہی تھی ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

جیل کے حکام نے تفریح کے خیال سے قیدیوں کو کرکٹ میچ دکھانے کا انتظام کیا۔

شام کو جب قیدیوں سے ان کے تاثرات معلوم کیے گئے تو سب نے ایک زبان ہو کر کہا : ” اچھا تو یہ تفریح تھی ، ہم تو اسے اپنی سزا کا حصہ سمجھ کر دیکھتے رہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

افسر نے رپورٹ پڑھتے ہوئے اپنے سیکرٹری سے کہا: ” ہمارے ملک میں تقریباً۲۰ لاکھ ٹی وی اور ۴۰ لاکھ ہاتھ رومز ہیں ۔“

سیکریٹری نے مؤد بانہ انداز میں پوچھا : ”جناب ! اس سے کیا ثابت ہوتا ہے؟“

افسر نے کہا : ” یہی کہ ۲۰ لاکھ لوگ بغیر نہائے ٹی وی دیکھ رہے ہیں ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

حج نے تیز رفتاری کے الزام میں گرفتار ملزم سے کہا: ”تم گاڑی اتنی تیز رفتاری سے کیوں چلاتے ہو؟“

ملزم : ” جناب! تیز رفتاری میری فطرت کا حصہ ہے۔“

حج : ”اچھا، میں دیکھتا ہوں کہ تم ایک سال کی قید کتنی تیز رفتاری سے کانتے ہو۔“

Urdu funny judge mujrim

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک آدمی نے کسی صاف ستھرے فقیر کو دس روپے دیتے ہوئے کہا : ” بابا ! میں ایک اخبار کا مدیر ہوں، میری ترقی کے لیے دعا کرنا ۔“

 یہ سن کر فقیر ی آنکھوں سے آنسوگر نے  لگے ۔  آدمی نے پوچھا : ” کیا ہوا بابا ! تم رو کیوں رہے ہو؟“

فقیر بھرائی ہوئی آواز میں بولا : ” تمھاری ترقی کے لیے کیا دعا کروں، میں خود ایک رسالے کا مدیر ہوں ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

طلحہ : ” خدا کا شکر ہے، میں انگلستان میں پیدا نہیں ہوا۔“

شہیر : ” کیوں؟“

طلحہ : ” مجھے انگریزی نہیں آتی ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک باتونی عورت نے اپنے شوہر سے کہا: ”آپ کے دوست کی بیوی کو محفل کے آداب نہیں آتے ۔ کل رات سالگرہ کی پارٹی میں جتنی دیر میں ان سے باتیں کرتی رہی ، وہ بار بار جمائیاں لیتی رہیں۔“

شوہر بولا : ”ممکن ہے، وہ بار بار کچھ کہنے کے لیے منہ کھول رہی ہوں ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 حسام : ” وہ نجومی تو بہت پہنچا ہوا نکلا۔“

ریان: ”وہ کیسے؟“

حسام : ” نجومی نے خالد سے کہا تھا کہ تمہاری زندگی میں بہت اُتار چڑھاؤ آئیں گے اور یہ واقعی سچ ہو گیا۔ وہ لفٹ مین بن گیا ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک جزیرے کے بارے میں یہ مشہور تھا کہ وہاں کے لوگوں کی عمریں بہت لمبی ہوتی ہیں ۔ ایک سیاح اس جزیرے کے ساحل پر اُترا تو ایک بوڑھے کو روتے دیکھا۔ سیاح نے پوچھا: ” بابا ! کیوں رو رہے ہو؟ “

بوڑھے نے کہا : ” دادا جی نے مارا ہے۔“

سیاح نے پوچھا: ” کیوں مارا ہے؟“

بوڑھے نے جواب دیا: ” میں نے دادا کے اخروٹ چُرائے تھے۔“

سیاح نے پوچھا: ”کیوں پرائے تھے؟“

بوڑھے نے بتایا : ” میرے والد کے دادا نے کہا تھا کہ اپنے دادا جی کے تھیلے میں سے اخروٹ نکال کر مجھے لا دو۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

بیوی : ” آج ہم اپنی شادی کی سالگرہ کس طرح منائیں گے؟“

شوہر : ” ہم اس حادثے کی یاد میں دومنٹ کی خاموشی اختیار کریں گے ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک سیاح اپنے سفر کا حال دوستوں کو سنا رہا تھا: ” اُف کس قدر لرزہ خیز منظر تھا ، جب میں افریقی قبائیلوں کے درمیان گھر گیا تھا۔ میرے آگے پیچھے، دائیں بائیں قبائلی ہی قبائلی کھڑے مجھے گھیرے ہوئے تھے ۔“

ایک دوست نے بے تاب ہو کر پوچھا: ”خدا کی پناہ! پھر تم نے کیا کیا ؟“

سیاح نے کہا : ”میں کر ہی کیا سکتا تھا، مجبوراً مجھے ان سے کمبل خرید نا پڑا ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک چوہیا اپنے تین بچوں کے ساتھ کہیں جارہی تھی۔ راستے میں ایک بلی آگئی ۔ چوہیا کے بچے خوف زدہ ہو گئے۔

چوہیا نے  پورا زور لگا کر کتے کی طرح بھو نکنے کی آواز نکالی۔ بلی فورا بھاگ گئی۔

چوہیا نے اپنے بچوں کو نصیحت کرتے ہوئے کہا ”دیکھا بچو! دنیا میں مادری زبان کے علاوہ دوسری زبان سیکھنی کتنی ضروری ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک شخص کسی بیمار کی عیادت کے لیے گیا اور وہاں جم کر بیٹھ گیا۔ بیمار بے چارہ آرام کرنا چاہتا تھا۔ جب اس نے دیکھا کہ یہ شخص کسی طرح اُٹھنے کا نام نہیں لے رہا ہے تو اس نے کہا : ” آنے جانے والوں کی کثرت نے مجھے پریشان کر دیا ہے۔“

وہ شخص اب بھی نہ سمجھا، بولا : ” آپ فرمائیے، تو اُٹھ کر دروازہ بند کر کے کنڈی لگا دوں؟“

بیمار نے عاجز آ کر کہا: ” ضرور لیکن باہر سے ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

زرعی کالج کے ایک طالب علم نے ایک باغبان سے کہا : ” باغبانی کے یہ طریقے بہت پرانے ہو گئے ہیں۔ اگر تمھارے اس درخت سے پانچ کلو سیب بھی پیدا ہو جائیں تے تو مجھے بڑی حیرت ہوگی ۔“

باغبان نے کہا: ”ہاں، حیرت تو مجھےبھی ہوگی، کیونکہ یہ آڑو کا درخت ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک ڈاکٹر نے دوسرے ڈاکٹر سےپوچھا : ” تم نے کبھی کسی مرض کی تشخیص میں غلطی کی؟“

دوسرا ڈاکٹر : ”ہاں، ایک مرتبہ میں نے ایک مریض کی صرف بد ہضمی کا علاج دوا سے کر کے اسے ٹھیک کر دیا ، حالانکہ وہ آسانی سے آپریشن کا خرچ برداشت کر سکتا تھا۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

بیوی: ” چلیے ، آج بازار سے ساڑھی خرید لا ئیں ۔“

شوہر: ” ساڑھیاں پہلے ہی بہت ہیں تمھارے پاس ۔“

بیوی : ” ساڑھی کے ساتھ ایک رومال مفت مل رہا ہے اور آپ کے پاس ایک بھی رو مال نہیں ہے ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک بس کا کنڈیکٹر ہکلا تھا۔ بس میں ایک ہکلا مسافر بھی بیٹھا تھا۔ کنڈیکٹر کرایہ وصول کرنے آ گیا : ” کک۔۔۔ کک۔۔۔کرایہ دیں ۔

ہکلا مسافر : ” ٹٹ۔۔۔۔ ٹٹ۔۔۔۔ ٹوٹے نہیں ہیں ۔“

مسافروں میں ایک تھانے دار بھی بیٹھا تھا۔ وہ اپنی جگہ سے اُٹھا اور دونوں کی پٹائی کرنے لگا۔

ایک مسافر بولا : ” بھائی! یہ دونوں بات کر رہے ہیں ، آپ کو کیا تکلیف ہے؟“

تھانے دار نے کہا: ” یہ۔۔۔۔ یہ۔۔۔۔ دونوں مم۔۔۔۔۔مم۔۔۔۔۔۔ میری نقل اتار رہے ہیں ۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک دن جنگل کے جانور یہ دیکھ کر حیران ہوئے کہ چوہا شیروانی پہن کر ، آنکھوں میں سرمہ لگائے، اکڑ اکڑ کر جنگل میں گھوم رہا  ہے۔

خرگوش نے پوچھا: ” کیا بات ہے! بڑے خوش نظر آ رہے ہو؟“

چوہے نے کہا : ” شیر کا بیٹا اغوا ہو گیا ہے اور پولیس کو مجھ پر شبہ ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مریض : ” ڈاکٹر صاحب! مجھے کھانے کے بعد بھوک نہیں لگتی اور سونے کے بعد نیند نہیں آتی۔“

ڈاکٹر : ” اس بیماری کا علاج میرے پاس نہیں ہے، دراصل مجھے بھی یہی بیماری ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ڈاکٹر کے پاس ایک آدمی آیا اور کہا : ”ڈاکٹر صاحب ! آپ نے مجھے پہچانا ؟“

ڈاکٹر : ”جی نہیں۔“

اس آدمی نے کہا : ” ڈاکٹر صاحب! میں وہی مریض ہوں جسے دو سال پہلے نمونیا ہو گیا تھا ۔ آپ نے مجھے نہانے سے منع کیا

تھا، میں یہ پوچھنے آیا ہوں کہ کیا اب میں نہا سکتا ہوں ؟“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مالک نے سزا کے طور پر نوکر کی ذمے داری لگائی کہ وہ ساری رات گھوڑے کی مالش کرے۔ نوکر نے گھوڑا بیچ دیا اور اس کی جگہ ایک خرگوش باندھ دیا۔ صبح مالک آیا تو گھوڑا غائب تھا ۔ اس نے نوکر سے پوچھا :

”گھوڑا کہاں ہے؟“

نوکر نے خرگوش کی طرف اشارہ کیا: ” وہ بندھا ہوا ہے۔“

مالک نے حیران ہو کر پوچھا : ” یہ کیا تماشا ہے؟“

نوکر بولا :” جناب! ساری رات مالش کرنے کی وجہ سے یہ گھس گیا ہے ، بس اتنا ہی بچا ہے۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

ایک ڈاکٹر نے مریض سے کہا : ” آپریشن بہت نازک ہے۔ اس کی فیس بھی زیادہ ہوگی لیکن فکر کی کوئی بات نہیں ہے۔ ایک لاکھ رپے تو ابھی دے دیں اور باقی دس ہزار روپے ماہانہ قسطوں کی صورت میں ادا کرتے ہیں ۔”

مریض پریشان ہو کر کہنے لگا : ”یہ تو ایسا لگ رہا ہے، جیسے میں کوئی فلیٹ کا سودا کر رہا ہوں ۔“

ڈاکٹر نے کہا : ” آپ کا اندازہ بالکل درست ہے، میں فلیٹ ہی خرید رہا ہوں۔“

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

امریکی کالم نگار ہنری ڈیوڈ تھور ہونے ایک کتاب لکھی اور اس کی ایک ہزار کا پیاں شائع کروا ئیں ۔ کتاب زیادہ نہ بک سکی اور مشکل سے تین سو کاپیاں فروخت ہوئیں۔

پبلشر کے کہنے پر اس نے سات سو چھے کتا بیں اُٹھا ئیں اور اپنے گھر میں رکھ لیں۔ پھر اپنی ڈائری میں لکھا: ” اب میری لائبریری میں کتابوں کی تعداد نو سو کے قریب ہوگئی ہے۔ ان میں سے سات سو سے زائد کتابوں کا مصنف میں خود ہوں۔“

متعلقہ ناولز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے